حویلی لکھا پولیس نے سرکس پر حملہ ، ملازمین، شائقین پر تشدد کیا: راشد فرزند

لاہور ( ٹیسکو نیوز) چیئرمین میاں فرزند سرکس میاں راشد فرزند نے کہا ہے کہ حویلی لکھا میں پولیس نے میرے سرکس پر ہلہ بول دیا جس کے نتیجے میں میرے سمیت سرکس کے متعدد ملازم اور تماشائی زخمی ہو گئے۔ میری نئی گاڑی تباہ ہو گئی اور الٹا مجھ پر ہی مقدمہ درج کرا دیا۔ میرا سرکس بند کرا دیا۔ میرے ملازم گرفتار کر لئے۔ مجھے دہشت گردوں سے اتنا خطرہ نہیں جتنا اپنے ہی ملک کی پولیس سے خطرہ ہے۔ وزیراعلیٰ پنجاب اور آئی جی پنجاب مجھے تحفظ فراہم کریں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور پریس کلب میں پریس کانفرنس میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے طریقہ کار کے مطابق ڈی سی سے اجازت لے کر حویلی لکھا میں سرکس لگائی ، 13 مارچ کو سرکس شروع کی۔ پہلے ہی روز حویلی لکھا کے ایس ایچ او ریاض الدین گجر نے اپنے ساتھیوں کے ہمراہ سرکس پر ہلہ بول دیا۔ میرے سمیت سرکس اہلکاروں اور تماشائیوں پر تشدد کیا۔ میری نئی گاڑی کے شیشے اور باڈی توڑ دی۔ میرے ملازم گرفتار کر لئے اور سرکس بند کرا دیا۔ سرکس میں 300 ملازم ہیں جو بیروزگار ہو گئے۔ میرے سرکس پر پولیس نے حملہ کیا۔ کیا میں را کا ایجنٹ ہوں؟ میں پاکستانی ہوں اور میری فیملی 66 سال سے سرکس کے ذریعے عوام کو صاف ستھری تفریح فراہم کر رہی ہے۔ حکومت سے مطالبہ ہے مجھے تحفظ فراہم کیا جائے

اپنا تبصرہ بھیجیں