بد عنوانی کا خاتمہ اولین ترجیح، فعال اینٹی کرپشن سٹرٹیجی کامیاب رہی: چیئرمین نیب

اسلام آباد ( ٹیسکو نیوز) قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین قمر زمان چوہدری نے کہا ہے کہ بد عنوانی کا خاتمہ نیب کی اولین ترجیح ہے، بد عنوانی پر قابو پانے میں نیب کی فعال اینٹی کرپشن سٹرٹیجی کامیابی رہی، نیب نے چائنہ پاکستان اکنامک کوریڈور پراجیکٹس کی نگرانی اور شفافیت کو یقینی بنانے کےلئے چین کے ساتھ مفاہمت کے یادداشت پر دستخط کئے، ملک بھر میں کرپشن کے خاتمے کے لئے زیرو ٹالرنس پالیسی اختیار کرتے ہوئے اپنے قومی فرض کی ادائیگی کے لئے کوششیں تیزکردی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ موجودہ حکومت کے دور میں نیب نے بد عنوان عناصر کے خلاف متعلقہ احتساب عدالتوں میں کرپشن ریفرنسز دائر کئے اور صرف اڑھائی سال کی مدت میں 45ارب روپے وصول کئے جو نیب کی نمایاں کامیابی ہے۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ 16سال کے دوران افراد، نجی اور سرکاری اداروں سے متعلق تین لاکھ 38ہزار 499شکایات وصول ہوئیں نیب نے 11442 شکایات کی تصدیق، 7528 انکوائریز اور 3810 انویسٹی گیشنز کیں، متعلقہ احتساب عدالتوں میں 2761 کرپشن ریفرنسز دائر کئے، سزا کا مجموعی تناسب 76فیصد رہا۔ انہوں نے کہاکہ نیب نے 287.415 ارب روپے بد عنوان عناصر سے وصول کئے اور اسے قومی خزانہ میں جمع کرایا۔ انہوں نے کہاکہ موجودہ انتظامیہ کے دور میں نیب کے علاقائی دفاتر کی تعداد 5سے بڑھ کر 8ہو گئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ نیب نے میرٹ پر این ٹی ایس کے ذریعے بی ایس 16 تا بی ایس 18 کے 104افسران کی بھرتی کی اور کسی بھی امیدوار نے کسی قانونی فورم پر کسی ایک بھی تقرری کو چیلنج نہیں کیا جو نیب کی موجودہ انتظامیہ کی شفافیت اور میرٹ کا مظہر ہے۔ میرٹ اور سنیارٹی پر 137افسران کو ترقی دی۔ قومی احتساب بیورو نے نااہل افسران کی برطرفی کے لئے داخلی احتساب کا نظام قائم کیا ہے، نیب نے 83 افسران کے خلاف کارروائی کی جن میں سے 34افسران کو معمولی سزائیں دی گئیں جبکہ 27افسران کو مس کنڈکٹ کی بنیاد پر ملازمت سے برخاست کیا گیا۔ نیب کی تدارکی کمیٹیاں مختلف محکموں میں نقائص اور بے قاعدگیوں کے خاتمے میں بڑی کامیاب رہی ہیں۔