آپریشن شروع نہ کرتے تو داعش پاکستان میں پنجے گاڑ لیتی، مشیر خارجہ

اسلام آباد ( ٹیسکو نیوز) سر تاج عزیز کہتے ہیں کہ ٹرمپ انتظامیہ سے مل کر دہشت گردی کا خاتمہ چاہتے ہیں، پاکستان ایکشن نہ لیتا تو داعش شمالی وزیرستان میں مرکز بنا چکا ہوتا۔ پاک امریکہ تعلقات کو فروغ دینے کیلئے ریجنل پیس انسٹی ٹیوٹ اور امریکی سفارتخانے کی جانب سے اہم نشست کا اہتمام کیا گیا۔ تقریب میں امریکی سفیر نے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیوں کو سراہا۔ اس موقع پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مشیر خارجہ سر تاج عزیز کا کہنا تھا کہ آپریشن ضرب عضب شروع نہ کرتے تو داعش پاکستان میں پنجے گاڑ لیتی، مدرسہ اصلاحات سے دہشتگردوں کی سپلائی کاٹ دیں گے، اگر ہم 2014ء میں آپریشن ضرب عضب شروع نہ کرتے تو داعش شمالی وزیر ستان کو اپنی آماجگاہ بنا لیتی، دہشتگردوں کے خلاف آپریشن کے اگلے مرحلے میں مدرسہ اصلاحات کی جائیں گی۔ پاک امریکہ تعلقات کے بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئے مشیر خارجہ کا کہنا تھا کہ امریکہ کے ساتھ پاکستان کے سکیورٹی اور معاشی تعلقات نہایت اہم ہیں، ضرب عضب سے دہشتگردی کے خاتمے میں بڑی کامیابی ملی، دہشتگردی کے واقعات میں گزشتہ سال کی نسبت 70 فیصد کمی آئی، آئندہ سال مزید کمی آئے گی۔ امریکی سفیر کا کہنا تھا کہ دہشتگردی کے خلاف پاکستان کی قربانیاں قابل ستائش ہیں، دونوں ممالک کے تعلقات میں اتار چڑھاؤ کے باوجود کبھی تعطل نہیں آیا۔