پاک بھارت تنازعات کے خاتمے کیلئے امریکا کی ثالثی کی پیشکش، وزیراعظم کا خیر مقدم

اسلام آباد: (جیوعوام) امریکی مشیر قومی سلامتی جنرل میک ماسٹر نے ٹرمپ انتظامیہ کی جانب سے پاکستان کے ساتھ تعلقات مضبوط بنانے کا پیغام دیا ہے۔ وزیراعظم نے بھی اس پیغام کا گرمجوشی سے جواب دیتے ہوئے نئی امریکی انتظامیہ کے ساتھ مل کر کام کرنے کے عزم کا اعادہ کیا ہے۔ امریکی مشیر قومی سلامتی جنرل میک ماسٹر نے نے اپنے وفد کے ہمراہ وزیراعظم نواز شریف کے ساتھ ملاقات کی اور انھیں ٹرمپ انتظامیہ کی جانب سے پاکستان کے ساتھ تعلقات کو مضبوط تر بنانے کی یقین دہانی کرائی۔ امریکی مشیر میک ماسٹر کا کہنا تھا کہ امریکا افغانستان سمیت ساؤتھ ایشیا ریجن میں امن اور استحکام کیلئے پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرنے کیلئے پرعزم ہے۔ اس موقع پر وزیراعظم نواز شریف نے امریکی قومی سلامتی مشیر میک ماسٹر سے کہا کہ پاکستان امریکا کے ساتھ مضبوط اور باہمی مفاد پر مبنی شراکت داری، افغانستان میں امن اور خطے کی ترقی کے لئے ٹرمپ انتظامیہ کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتا ہے۔ امریکی صدر کی پاکستان اور بھارت میں ثالثی سے خطے میں پائیدار امن و خوشحالی آئے گی۔ سرکاری میڈیا کے مطابق وزیراعظم نوازشریف نے کہا کہ پاکستان خطے اور دنیا میں امن و استحکام کے فروغ کے لئے امریکا کے ساتھ پائیدار اور باہمی مفاد پر مبنی شراکت داری کا خواہاں ہے۔ نواز شریف نے کہا کہ پاکستان افغانستان کے مسئلے کے حل کیلئے عالمی برادری کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لئے تیار ہے۔ بھارت کے ساتھ تعلقات کے حوالے سے وزیراعظم نے اس موقف کا اعادہ کیا کہ مسئلہ کشمیر سمیت پاکستان اور بھارت کے درمیان تمام تصفیہ طلب مسائل کے حل کے لئے پائیدار مذاکرات اور بامعنی رابطے ہی آگے بڑھنے کا واحد راستہ ہیں۔ انہوں نے پاکستان اوربھارت کی تنازعات خصوصاً کشمیر کے مسئلے کے حل میں مدد کرنے کیلئے صدر ٹرمپ کی آمادگی کا خیر مقدم کیا۔ اس سے قبل جنرل میک ماسٹر نے مشیر خارجہ سرتاج عزیز سے بھی ملاقات کی، جس میں دو طرفہ تعلقات، خطے کی سیکیورٹی اور افغانستان میں قیام امن کے معاملات زیر غور آئے۔