پنجاب حکومت نے کورونا پر ریسرچ اسرائیلی تنظیم کے سپرد کردی

پنجاب حکومت نے کورونا پر ریسرچ اسرائیلی تنظیم کے سپرد کردی ہے۔ سٹی فورٹی ٹو نیوز کی رپورٹ کے مطابق پنجاب حکومت نے کورونا پر ریسرچ کے لیے اسرائیلی تنظیم کو تعاون فراہم کردیا ہے جبکہ صوبائی حکومت ریسرچ کی رجسٹریشن کے لئے پنجاب حکومت سپانسر بھی کررہی ہے۔ خبررسں ادارے نے دعویٰ کیا ہے کہ پنجاب حکومت اب کورونا کے مریضوں پر میڈیکل ریسرچ کرنے جارہی ہے اور مختلف قرنطینہ سنٹرز میں اس حوالے سے مریضوں سے حلف بھی لیے جارہے ہیں۔
محکمہ اسپشیلائزڈ ہیلتھ کئیر کے باوثوق ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ یہ ریسرچ یہودی میڈیکل سنٹر سے کروائی جارہی ہے جبکہ پرائیوٹ ڈاکٹرزکے زریعے ہونے والی ریسرچ میں حکومت سرکاری سطح پر ہر طرح کا تعاون کررہی ہے ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اسرائیل کی مدد سے ہونے والی ریسرچ میں میں کرونا کےمریضوں پر کلوروکین اور ہائیڈرو کسی کلورکین دوا کا تجربہ کیا جارہا ہے ۔

جبکہ یہودی تنظیم کی تحقیق میں شرکت کے لیے کرونا کے مریضوں سے حلف نامہ بھی لیا جارہا ہے ۔ دوسری جانب پنجاب میں اب تک کئے جانیوالے کورونا ٹیسٹوں کی تفصیلات سامنے آگئیں تفصیلات کے مطابق دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ ملک بھر میں کورونا وائرس ٹیسٹ کی استعداد کار بڑھا دی گئی ہے ۔ روزانہ5 ہزار سے بھی زائد ٹیسٹ کئے جائیں گے، تاہم حقیقت اس سے برعکس نظر آتے ہیں ، گزشتہ روز ہی کی بات کی جائے تو پنجاب میں 2295 افراد کا کورونا ٹیسٹ کیا گیا ہے۔
ترجمان پنجاب حکومت مسرت چیمہ نے کہا ہے کہ پنجاب میں 95فیصد ایسے مریضوں میں خاص عالامات نہیں تھی،جن کے ٹیسٹ کیے ان میں 8فیصد مریضوں میں علامات ہیں اور ان میں بھی 2فیصد کی حالت تشویشناک ہیں، مئی کے آخر تک پنجاب میں10ٹیسٹوں کی صلاحیت کردیں گے۔انہوں نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں بتایا کہ پنجاب حکومت کی ٹیسٹنگ کی صلاحیت5 ہزار سے زیادہ ہے، لیکن اس میں کوئی شک نہیں کہ ہمارے پاس جتنے سیمپل آتے ہیں ہم ٹیسٹ بھی اتنے ہی کررہے ہیں۔