نیشل کمانڈ اینڈ کنٹرول کے اجلاس میں اندرون ملک پروازیں شروع کرنے کا فیصلہ کرلیاگیا

وفاقی وزیر ہوا بازی ڈویژن غلام سرور خان نے کہا ہے کہ نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول کے اجلاس میں تمام صوبائی و علاقائی سٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے تمام شیڈول اور باقاعدہ ملکی پروازیں دوبارہ شروع کر نے کا اصولی فیصلہ کر لیا گیا ہے حتمی منظوری وزیراعظم عمران خان دیں گے۔ بدھ کو جاری اپنے ایک ویڈیو پیغام میں وفاقی وزیر نے کہا کہ عوام کی فرمائش تھی کہ اندرون ملک ریگولر شیڈولڈ فلائٹس شروع کی جائیں، یہ چیز این سی او سی کے اجلاس میں زیر غور آئیں جبکہ یہ معاملہ پہلے بھی کئی فورمز پر زیر غور آ چکا ہے۔
این سی او سی کے اجلاس میں مختلف اداروں کے سربراہان و افسران کے علاوہ مختلف وزارتوں کے وزراء بھی شامل تھے۔

اجلاس میں چاروں صوبوں کے چیف ایگزیکٹوز اور دو اکائیوں آزاد جموں و کشمیر اور گلگت بلتستان کے چیف ایگزیکٹوز بھی موجود تھے۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ اندرون ملک پروازیں شروع کر دی جائیں لیکن حتمی فیصلہ وزیراعظم عمران خان نے کرنا ہے اور قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں بھی زیر بحث لایا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ امید ہے کہ صوبائی وزرائے اعلیٰ کی مشاورت سے یہ فیصلہ ہو جائے گا۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ اگر اندرون ملک پروازوں کی اجازت مل گئی تو ہمارا ارادہ ہے کہ کراچی، پشاور، کوئٹہ، لاہور کے درمیان مختلف پروازیں چلائی جائیں۔ انہوں نے کہا کہ جیسے پہلے کنسٹرکشن اور زراعت کے شعبے کو اجازت ملی اور پھر اس سے متعلقہ دکانوں کو کھولنے کی اجازت ملی اسی طرح دیگر شعبے جن کو کھولا گیا ان سے متعلقہ دکانوں اور اداروں کو کھولا گیا۔
انہوں نے کہا کہ ہم نے این سی او سی کے اجلاس میں چھوٹے تاجروں کے مسائل کا معاملہ بھی اٹھایا ہے، چھوٹے تاجروں کو بھی دکانیں کھولنے کی اجازت ہونی چاہیے، جیسے کہ دیگر ادارے کھولے جا رہے ہیں، اس حوالے سے مکمل ایس او پی کی ضرورت ہو گی، وہ بنائی جا رہی ہے جس کی کل وزیراعظم عمران خان سے منظوری لی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد لوگوں کیلئے آسانی پیدا کرنا ہے لیکن ساتھ ساتھ لوگوں کی جانوں کا خیال بھی رکھنا ہے۔ غلام سرور خان نے کہا کہ عوام کو بھی چاہیے کہ حکومت وقت جو بھی فیصلہ کرے اس پر عملدرآمد کو یقینی بنایا جائے۔