تین ادویات کے فارمولے سے 86 فیصد کورونا مریض صحتیاب ہوگئے

کورونا وائرس کےعلاج کیلئے ڈرگ ٹرائل کے ابتدائی نتائج جاری کردیے گئے، تین ادویات ہائیڈروکسی کلوروکوئن، ازتھرومائسن اور اوسلٹا مویر کا کمبینیشن انتہائی کامیاب رہا، جس سے صحتیابی کی 86 فیصد شرح ریکارڈ کی گئی،ریسرچ میں 18سال سے زائد عمر کے کورونا مریضوں کو شامل کیا گیا۔ وی سی یونیورسٹی ہیلتھ سائنسز پروفیسر جاوید اکرم جو اس تحقیقی پراجیکٹ کے پرنسپل انوسٹی گیٹر بھی ہیں۔
انہوں نے بتایا کہ یہ ریسرچ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے زیراہتمام کی جارہی ہے۔ کورونا مریضوں کو تین ادویات فارمولے اور مختلف کمبینیشن میں دی گئیں۔ادویات میں ہائیڈروکسی کلوروکوئن، ازتھرومائسن اور اوسلٹا مویر شامل تھیں۔

ریسرچ میں 8شہروں سے 10 یونیورسٹیوں سمیت 12 مراکز کو شامل کیا گیا۔ریسرچ میں 18سال سے زائد عمر کے کورونا مثبت مریضوں کو شامل کیا گیا۔

ریسرچ میں شامل 60 فیصد کورونا مریض مرداور 40 فیصد خواتین مریض شامل تھیں۔ان کے سات گروپس بنائے گئے جبکہ ایک کنٹرول گروپ کو کچھ نہیں دیا گیا۔ ان کو مختلف کمبینیشن میں ادویات دی گئیں۔ ادویات کے کمبینیشن سے سب سے زیادہ صحت یابی کی شرح 86 فیصد رہی۔ دوسرے نمبر پر ازتھرومائسن سے صحت یابی کی شرح 75 فیصد رہی۔اگر مریضوں کی صحتیابی کی مجموعی شرح کو دیکھا جائے تو مجموعی شرح 73.1 فیصد رہی۔
بغیر ادویات کے صحتیابی کی شرح 67 فیصد رہی۔27 فیصد مریض ادویات کے استعمال کے 2ہفتے بعد بھی پازیٹو رہے۔ڈرگ ٹرائل 30اپریل کو شروع ہوا، ڈرگ ٹرائل کی نیشنل بائیوایتھکس کمیٹی سے منظوری لی گئی۔ واضح رہے آج پیر کے روز یو ایچ ایس نے ابتدائی طور پر 5 جولائی تک شامل کیے گئے 525 مریضوں کا ڈیٹا جاری کیا گیا۔ نتائج کا اعلان وائس چانسلر یو ایچ ایس پروفیسر جاوید اکرم نے خصوصی تقریب میں کیا۔
جس کے مہمان خصوصی گورنر پنجاب چودھری محمد سرور تھے۔ وائس چانسلر یو ایچ ایس نے واضح کیا کہ یہ ریسرچ کے ابتدائی نتائج ہیں۔ تحقیق ابھی جاری ہے۔ مکمل تحقیق میں 9500 مریض شامل ہوں گے۔ پروفیسر جاوید اکرم نے بتایا کہ تحقیق پر اب تک تین کروڑ روپے خرچ ہوئے جو یونیورسٹی نے اپنے وسائل اور عطیات سے جمع کیے۔ تقریب میں وی سی کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی پروفیسر خالد مسعود گوندل، وی سی فاطمہ جناح میڈیکل یونیورسٹی پروفیسر عامر زمان خان نے بھی شرکت کی۔
پروفیسر خالد مسعود گوندل نے اپنے خطاب میں کہا کہ عید الاضحی پر ایس او پیز پر عملدرآمد کیا گیا تو ستمبر تک کورونا پر قابو پالیں گے۔ صوبائی وزیر ہائیر ایجوکیشن راجہ یاسر ہمایوں نے کہا کہ میڈیکل ادارے تحقیق میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ پاکستانی ڈاکٹرز دنیا بھر میں خدمات انجام دے رہے ہیں۔ انھوں نے تحقیق کے حوالے سے یو ایچ ایس کے کردار کو سراہا اور کہا کہ تحقیق کے نتائج حوصلہ افزاء ہیں۔
تقریب میں پروفیسر عزیز الرحمن، ڈاکٹر شہلا جاوید اکرم، پروفیسر مریم نواز تارڑ،جسٹس ریٹائرڈ تصدق حسین جیلانی، ابرارالحق، پروفیسر محمود ایاز ، پروفیسر اسد اسلم، ڈاکٹر صومیہ اقتدار، ڈاکٹر فرح خالد، پروفیسر ظفر گل، پروفیسر حنیف ناگرہ، پروفیسر محمد شہزاد، ڈاکٹر اللہ رکھا، وقاص لطیف، فیصل امین اور ڈاکٹر شاہ نور نے شرکت کی۔ آخر میں گورنر پنجاب چودھری محمد سرور نے ریسرچ میں حصہ لینے والوں میں شیلڈز تقسیم کیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں