ٹرمپ دنیا میں امریکا کے لیے شرمندگی کا باعث بن رہے ہیں. جو بائیڈن

امریکہ کے نومنتخب صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے صدارتی انتخاب میں اپنی شکست تسلیم نہ کر کے دنیا میں امریکا کے لیے شرمندگی کا باعث بن رہے ہیں. جو بائیڈن جو کہ الیکشن کے متوقع نتائج میں فاتح قرار پائے ہیں اور عالمی راہنماﺅں سے رابطے قائم کرنے میں مصروف ہیں انہوں نے کہا کہ قیادت کو منتقل ہونے سے کوئی نہیں روک سکتا یہ بحث اس وقت شروع ہوئی جب صدر ٹرمپ نے ٹوئٹر پر ایک ٹویٹ کرتے ہوئے غیر مصدقہ دعویٰ کیا کہ وہ اختتام میں جیت جائیں گے اس بات سے قطع نظر کہ اکثر بڑے ذرائع ابلاغ انتخاب میں ان کی شکست کی تصدیق کر چکے ہیں.
ریاستی نتائج کی سرکاری سطح پر تصدیق نہیں ہوئی اور کچھ مقامات پر ووٹوں کی گنتی بھی جاری ہے الیکشن کے حتمی نتائج کا اعلان 14 دسمبر کو امریکی الیکٹرول کالج کی ایک ملاقات میں ہو گا ڈیموکریٹ امیدوار بائیڈن سے جب ڈیلاویئر میں پوچھا گیاکہ وہ ٹرمپ کی جانب سے شکست تسلیم نہ کرنے پر کیا سوچتے ہیں تو ان کا جواب تھا کہ میرے مطابق یہ باعث شرمندگی ہے.
انہوں نے کہاکہ میں ایک بات کہہ سکتا ہوں کہ اس سے صدر کی میراث کو کوئی فائدہ نہیں پہنچے گا دن کے اختتام پر آپ کو معلوم ہونا چاہیے کہ 20 جنوری کو سب واضح ہو جائے گایہاں وہ صدارت کی منتقلی کی تقریب کا حوالہ دے رہے تھے. بائیڈن جہاں ایک طرف صدارت کا عہدہ سنبھالنے کی تیاریاں کر رہے ہیں تو وہیں ان کے عالمی راہنماﺅں سے بھی رابطے قائم ہوئے ہیں برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن، فرانسیسی صدر ایمانویل میکخواں اور جرمن چانسلر اینگلا مرکل نے ان سے آج بات چیت کی ہے.
ان رابطوں پر بائیڈن کا کہنا ہے کہ میں نے انہیں بتایا ہے کہ امریکہ واپس آ گیا ہے ہم گیم میں واپسی کر رہے ہیں جہاں وہ اور نومنتخب نائب صدر کملا ہیرس مستقبل کے منصوبوں پر کام کر رہے ہیں اسی دوران ٹرمپ کے تعینات کردہ افسران امریکی صدارت کی منتقلی کے عمل میں تاخیر ہونے میں مدد کر رہے ہیں. جنرل سروسز ایڈمنسٹریشن نامی امریکی ادارہ مختلف اداروں کی فنڈنگ اور الیکشن کے بعد نئی انتظامیہ تک اداروں سے متعلق معلومات فراہم کرتا ہے اس ادارے نے اب تک بائیڈن کو نومنتخب صدر تسلیم نہیں کیا بائیڈن کا کہنا ہے کہ مجھے نہیں لگتا کہ کوئی چیز ہماری رفتار کم کر سکے گی.
صدر ٹرمپ نے ٹوئٹر پر دوبارہ دہرایا کہ ووٹوں کی گنتی میں بڑی بدعنوانی ہوئی ہے ہم جیت جائیں گے مگر حسب سابق ٹوئٹر نے ان کی ان ٹویٹ کو متنازع قرار دیا ہے صدر کا کہنا ہے کہ بائیڈن صرف اس وجہ سے الیکشن جیتے کیونکہ صدارتی انتخاب میں بدعنوانی ہوئی تاہم صدر ٹرمپ کی جانب سے اب تک اس الزام کو ثابت کرنے کے لیے کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا گیا. امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو جنہیںٹرمپ کا سب قریبی ساتھی سمجھا جاتا ہے نے کہا کہ جب تمام جائز ووٹوں کو گن لیا جائے گا تو یہ ثابت ہو جائے گا کہ ٹرمپ انتظامیہ کا دوسرا دور شروع ہو گیا ہے.
اس دوران رپبلکن پارٹی کے بعض سنیئر راہنماﺅں نے بائیڈن کی متوقع فتح کو تسلیم نہیں کیا جب سینیٹر رون جانسن سے اس بارے میں پوچھا گیا تو ان کا جواب تھا کہ ’(بائیڈن کو) مبارکباد دینے کا کوئی جواز نہیں سینیٹر روئے بلنٹ کہتے ہیں کہ ٹرمپ شاید کبھی ہارے ہی نہیں تھے. سینیٹ میں رپبلکن راہنما مِچ مکونل کے مطابق ٹرمپ کے پاس حق ہے کہ وہ پینسلوینیا جیسی کڑے مقابلے والی ریاست میں قانونی چارہ جوئی کریںپینسلوینیا میں ایک پوسٹل ورکر نے دعویٰ کیا تھا کہ حکام نے ڈاک کے ذریعے درج کردہ ووٹوں میں بدعنوانی کی ان کا دعویٰ تھا کہ پینسلوینیا میں ایک پوسٹ ماسٹر نے ملازمین سے کہا تھا کہ ووٹوں کو پچھلی تاریخ میں درج کر دو تاکہ انھیں گنا جا سکے.
انہوں نے حلف لے کر یہ دعویٰ قانونی طور پر ایوان نمائندگان کی ایک کمیٹی میں درج کروایا لیکن اس کمیٹی کا کہنا ہے کہ جب امریکی پوسٹل سروس کے انسپکٹر جنرل نے ان سے پوچھ گچھ کی تو انہوں نے اپنا الزام واپس لے لیا تھا. بیان میں کہا گیا کہ یوٹیوب پر لگائی گئی ایک ویڈیو میں اس فرد کا کہنا تھا کہ میں نے یہ بیان درج نہیں کروایا ایسا نہیں ہوا اور آپ اس بارے میں کل تک جان لیں گے ٹرمپ نے اس ویڈیو کو ری ٹویٹ کیا تھا اور اس فرد کو سراہا تھا ٹرمپ کے حامیوں نے اس شخص کے بیان کی بنیاد پر قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے.