این اے75 کے 23 پولنگ اسٹیشنز کے نتائج کا معاملہ سماعت کیلئے مقرر

الیکشن کمیشن آف پاکستان نے ڈسکہ این اے 75ضمنی الیکشن میں 23 پولنگ اسٹیشنز کے نتائج روکنے کا معاملہ سماعت کیلئے مقرر کردیا ،چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں 5رکنی بنچ کل سماعت کرے گا، الیکشن کمیشن سماعت کے بعد انتخابی نتائج جاری کرنے یا نہ کرنے سے متعلق فیصلہ سنائے گا۔تفصیلات کے مطابق الیکشن کمیشن آف پاکستان نے ڈسکہ این اے 75 ضمنی الیکشن میں 23 پولنگ اسٹیشنز کے نتائج روکنے کا معاملے کو سماعت کیلئے مقرر کردیا ہے۔
چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں 5 رکنی بنچ کل صبح 10بجے کیس کی سماعت کرے گا، الیکشن کمیشن نے ریٹرننگ اآفیسر کو طلب کرلیا ہے۔ ریٹرننگ آفیسر تحقیقاتی رپورٹ پر اپنا بیان دیں گے۔الیکشن کمیشن نے ن لیگ کی انتخابی امیدوار سیدہ نوشین افتخار کو بھی نوٹس جاری کردیا ہے، الیکشن کمشین سماعت کے بعد انتخابی نتائج جاری کرنے یا نہ کرنے سے متعلق فیصلہ سنائے گا۔
واضح رہے ڈسکہ کے حلقہ این اے 75 میں19 فروری کو ہونے والے الیکشن اس وقت متنازع ہوگئے جب 23 پولنگ اسٹیشنز کا عملہ غائب ہوگیا اور ان کے گھنٹوں فون بند رہے، الیکشن کمیشن کی جانب سے رابطے کرنے کے باوجود ان پریزائیڈنگ آفیسرز سے کوئی رابطہ نہیں ہوسکا، جبکہ چیف سیکرٹری اور آئی جی پنجاب سے بھی رابطہ نہ ہوپایا۔ بعدازاں پی آراوز سے معلوم ہوا کہ دھند کی وجہ سے فون بند ہوگئے تھے۔
جس پر ن لیگ کی امیدوار سیدہ نوشین نے الیکشن میں اپنی جیت قرار دیتے ہوئے الیکشن کمیشن آف پاکستان کو درخواست دی کہ ان پولنگ اسٹیشن کے نتائج روکے جائیں۔ ان نتائج میں دھاندلی کی جارہی ہے۔ جس پر الیکشن کمیشن نے ان پولنگ اسٹیشنز کے نتائج روک دیے ، جبکہ پی ٹی آئی اور ان کے امیدوار اسجد ملہی نے بھی اپنی جیت قرار دیا اور کہا کہ نتائج فوری جاری کیے جائیں۔