جہانگیر ترین کے شکوؤں پر حکومت کا جواب آ گیا

پاکستان تحریک انصاف کے شکوؤں کے بعد مشیر احتساب و داخلہ شہزاد اکبر نے اہم پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ 13 شوگر مل انڈر انویسٹیگیشن ہیں۔شریف فیملی کا منی لانڈرنگ کا معاملہ 8 ارب کا بنتا ہے۔ جے ڈی ڈبلیو کا منی لانڈرنگ کا معاملہ 8 ارب روپے کا بنتا ہے۔ کسی گروہ یا کسی ایک شخص کو نشانہ نہیں بنایا جارہا ہے۔
اگر آپ کا نعرہ احتساب کا ہے تو یہ نہیں ہو سکتا ہے کہ دوسروں کا کریں اپنا نہ کریں۔ چینی مافیا کے خلاف 10 ایف آئی آر درج ہو چکی ہیں۔ جی ڈبلیو بی کی ملکی چینی کی پیداوار میں 20 فیصد حصہ ہے۔شہزاد اکبر نے مزید کہا کہ اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کے جہانگیر ترین کے ہمراہ عدالت جانے سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔میں نہیں بتا سکتا جہانگیر ترین کا اشارہ کس کی جانب تھا۔
جہانگیرترین ہمارے اپنے ہیں، ان کے تحفظات ہیں۔وزیراعظم عمران خان کا موقف ہے کہ جب سوال کیا جائے تو جواب دیا جائے گا۔پی ٹی آئی میں جتنی جمہوریت ہے کسی اور جماعت میں نہیں۔قانون عمل کو پارٹی نہیں چلاتی۔ہم نے من پسند افراد کو اداروں میں تعینات نہیں کیا، ہم قانونی معاملات میں مداخلت نہیں کرتے۔قبل ازیں ) پاکستان تحریک انصاف کے رہنماء جہانگیر ترین نے کہا ہے کہ میرے خلاف ایک نہیں بلکہ 3 ایف آئی آرز درج ہیں ، ایک سال سے چپ ہوں لیکن ظلم بڑھتا جا رہا ہے، ملک کی 80 شوگر ملز میں سے انہیں صرف جہانگیر ترین نظر آیا، میں پوچھتا ہوں آخر یہ انتقامی کارروائی کیوں ہو رہی، وجہ کیا ہے؟۔
تفصیلات کے مطابق لاہور میں میڈیا کے نمائندگان سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میری وفاداری کا امتحان لیا جا رہا ہے، یہ کیا ہو رہا ہے؟ انہیں سب شوگر ملز میں صرف جہانگیر ترین نظر آیا؟ تحریک انصاف سے انصاف مانگ رہے ہیں، میں تو دوست تھا مجھے دشمنی کی طرف کیوں دھکیل رہے ہو؟۔