میکسیکو کے وزیر خارجہ نے امریکہ کی امیگریشن پالیسی کو تنقید کا نشانہ بنایا

امریکہ ( ٹیسکو نیوز) مسٹر ویدیگیرے نے یہ بھی بتایا کہ جمعرات کی میٹنگ میں انھوں نے ٹرمپ انتظامیہ کی جانب سے امریکہ میں غیر قانونی تارکین وطن کی آمد کی حوصلہ شکنی کے لیے بچوں کو ان کے والدین سے جدا کرنے کے اقدام پر غور و خوض پر تشویش ظاہر کی ہے۔
انھوں نے امریکہ میں قائم میکسیکو کے سفارت خانے میں کہا کہ ‘خاندان کی سالمیت انسانی حقوق کی بنیاد ہیں۔’
بی بی سی کی نمائندہ باربرا پلیٹ کے مطابق رواں ہفتے کے اوائل میں ڈیموکریٹک پارٹی کے سینیٹروں کے ایک گروپ نے خدشہ ظاہر کیا تھا کہ وزارت خارجہ کو مختلف چلینجز کا سامنا ہے جس کے تحت امریکی خارجہ امور کی قیادت کو دھچکہ لگتا ہے۔
امریکی وزیرِ خارجہ ریکس ٹیلرسن کے نام ایک خط میں انھوں نے لکھا تھا کہ وزارت خارجہ میں مینجمنٹ کی سطح پر اہم چیلنجز سامنے آ رہے ہیں اور اسے اہم خارجہ امور کے فیصلوں میں نظر انداز کیا جا رہا ہے۔ اس کے علاوہ صدر ٹرمپ کی جانب سے وزارت کے بجٹ میں کٹوتی سے امریکی سفارت کاری بری طرح مجروح ہو سکتی ہے۔