زیرالتوا مقدمات کا کلچر ختم کرنا ہے‘ سستے انصاف کی بدولت عوام کا رجحان مصالحت کی جانب بڑھ رہا ہے : چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

لاہور ( سکائی نیوز) چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ سید منصور علی شاہ نے سیشن کورٹ میں قائم مصالحتی مراکز کا دورہ کیا۔ چیف جسٹس نے مصالحتی مراکز میں بطور میڈی ایٹر کام کرنے والے ججز کے کام کو سراہا۔ جسٹس منصور نے کہاکہ سنٹرز میں سستے اور بروقت انصاف کی فراہمی کی بدولت عوام کا رحجان مصالحت کی جانب بڑھ رہا ہے اور سائلین کی اس دلچسپی کو مدنظر رکھتے ہوئے میڈی ایٹرز کی تعداد میں اضافہ کیا جا رہا ہے جو روزانہ کی بنیاد پر کام کریں گے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ بات چیت اور مصالحت کے ذریعے سو فیصد مقدمات کا نمٹایا جانا عدلیہ کی بڑی کامیابی ہے اور ایسے بہترین نتائج کی وجہ سے مصالحتی سینٹرز کا دائرہ اختیار پنجاب کے تمام اضلاع تک پھیلایا جا رہا ہے۔ میڈی ایشن سنٹرز میں فیملی، سول اور دیگر پرانے مقدمات کو بات چیت کے ذریعے ایک یوم میں نمٹایا جانا فوری انصاف کی فراہمی کی عمدہ مثال ہے۔7 مارچ سے قائم ہونے والے لاہور کے دو مصالحتی سینٹرز میں اب تک 80 مقدمات میں سے زیادہ ترمقدمات مصالحانہ طریقے سے نمٹائے جاچکے ہیں اور وکلاءاور سائلین کی جانب سے مصالحتی طریقہ انصاف پر بڑھتے ہوئے اعتماد کے سبب لاہور میں مصالحتی سینٹرز کی تعداد کو دو سے بڑھا کر تین کر دیا گیا۔ اگلے ہفتے سے پنجاب جوڈیشل اکیڈمی میں صوبہ بھر سے72 ججز کو میڈی ایشن کے تربیتی کورس کا آغاز ہورہا ہے اور ٹریننگ کے بعد پنجاب کے باقی 35 اضلاع میں بھی مصالحتی مراکز کام شروع کر دیں گے۔ ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججز کو ہدایات جاری کر دی گئی ہیں کہ ہر ضلع میں اے ڈی آر سنٹرز کے قیام کے حوالے سے تشہیر کریں اور اس کے افادیت سے عام لوگوں کو آگاہ کریں۔ ہمیں لاکھوں کی تعداد میں زیر التواءمقدمات کو نمٹانا ہے اور ایک نئے دور کا آغاز کرنا ہے، زیر التواءمقدمات کے کلچرکو ختم کرنا ہے، صوبائی عدلیہ میں بہت سارے اقدامات کئے جارہے ہیں، چیف جسٹس نے کریمنل جسٹس سسٹم کے تحت چھ اضلاع اٹک، وہاڑی، چنیوٹ، نارووال، منڈی بہاﺅالدین اور لودھراں میں جاری پائلٹ پراجیکٹ کے حوالے سے بتایا کہ یکم فروری سے 31 مارچ تک محض دو ماہ میں 1294 ٹرائل مکمل کئے جا چکے ہیں جس کی عدالتی تاریخ میں نظیر نہیں ملتی جبکہ ضلع نارووال میں تمام کریمنل ٹرائلز ختم ہونے کے قریب ہیں۔ ماڈل عدالتوں میں فوجداری مقدمات نمٹانے میں ججزوکلائ، پراسکیوشن اور دیگر سٹیک ہولڈرز نے اہم کردار ادا کیا ہے۔ مذکورہ پراجیکٹ کامیابی سے جاری ہے اور بہت جلد اس کے ثمرات صوبہ بھر میں میسر ہونگے۔چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کی ہدایت پر صوبہ بھر میں مصالحتی سنٹرزکیلئے 72 جوڈیشل افسروں کو بطور میڈی ایٹرز نامزد کیا گیا ہے۔ 24 ججز کیلئے پانچ روزہ ٹریننگ کورس کل شروع ہوگا۔