وزیراعظم کا آٹا چینی بحران کی تحقیقاتی رپورٹ پیش نہ کرنے پر برہمی کا اظہار

وزیراعظم عمران خان نے آٹا چینی بحران کی تحقیقاتی رپورٹ پیش نہ کرنے پر برہمی کا اظہار کیا، انہوں نے کہا کہ آٹا چینی بحران کی رپورٹ ایک ہفتے میں پیش کی جائے،اگررپورٹ تیارہے تو کابینہ ڈویژن نے پیش کیوں نہیں کی؟ عوام سے وعدہ کیا ہے کہ ذمہ داروں کو بےنقاب کیا جائےگا۔ وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا، اجلاس میں کابینہ نے ایجنڈے میں شامل متعدد نکات کی منظوری دے دی۔وفاقی کابینہ نے 4 مارچ کے ای سی سی کے فیصلوں کی توثیق بھی کردی ہے۔ ای سی سی نے اپنے اجلاس میں ایچ ای سی کیلئے 5 ارب روپے کی ضمنی تکنیکی گرانٹ کی منظوری دی تھی۔ وفاقی کابینہ نے کیڑے مار ادویات بھارت سے درآمد کرنے کی اجازت نہیں دی، وزیراعظم نے کہا کہ موجودہ حالات میں بھارت سے تجارت ممکن نہیں۔

وزیراعظم عمران خان نے چینی اور آٹے بحران کی رپورٹ پیش نہ کرنے پر برہمی کا اظہار کیا، اگررپورٹ تیار ہوگئی ہے تو کابینہ ڈویژن نے رپورٹ پیش کیوں نہیں کی؟ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ آٹے چینی کے بحران کے ذمہ داروں کی ایک ہفتے میں رپورٹ پیش کی جائے۔

عوام سے وعدہ کیا ہے کہ ذمہ داروں کو بے نقاب کیا جائے گا۔ بجلی بلوں سے متعلق پالیسی سے مطمئن نہیں، کوئی واضح پالیسی بنائی جائے، جس پر وزیراعظم نے کہا کہ عوامی مفاد سے متعلق امور جلد مکمل کیے۔ کابینہ میں غیرمنافع بخش اداروں کی نجکاری کا بھی جائزہ لیا گیا، وزیراعظم نے کہا کہ غیرمنافع بخش اداروں کی نجکاری کی جائے۔ کابینہ نے کراچی پورٹ ٹرسٹ کے لیے جی ایم ایڈمن، پاکستان حلال اتھارٹی کے ڈی جی اور چیئرمین سیکورٹیز ایکسچینج پالیسی بورڈ کی تعیناتی کی بھی منظوری دے دی ہے۔ اسلام آباد کے ڈومیسائل ہولڈرز کیلئے گریڈ ایک تا 15 کی ملازمتوں کا کوٹہ 100 فیصد کرنے کی منظوری دے دی ہے۔