اسلامی نظریاتی کونسل نے زینب الرٹ بل کا نام تبدیل کرنے کی تجویز پیش کر دی

اسلامی نظریاتی کونسل نے زینب الرٹ بل کا نا م تبدیل کرنے کی تجویز پیش کر دی ہے۔تفصیلات کے مطابق اسلامی نظریاتی کونسل حکام کی جانب سے یہ تجویز پیش کرتے ہوئے موقف اپنایا گیا ہے کہ بل کا نام تبدیل ہونا چاہیئے۔ اگر یہی نا م استعمال ہوتا رہا تو ننھی زینب کے گھر والے اس حادثے کو کبھی بھول نہیں سکیں گے اور ہمیشہ دباﺅ کا شکار رہیں گے۔تجویر پیش کی گئی ہے کہ نام تبدیل کیا جائے، ورنہ معاشرے میں زینب کا مسئلہ ہمیشہ کے لئے ا ن کے گھر والوں کے لئے اذیت بن جائے گا۔ یاد رہے کہ قومی اسمبلی کے بعد سینیٹ نے بھی زینب الرٹ بل کی منظوری دے دی تھی۔ قومی اسمبلی سے منظوری کے بعد اس بل میں کچھ ترامیم کی درخواست کی گئی تھی ۔بل ترامیم کے بعد قائمہ کمیٹی نے منظور کیا تھا جس کے بعد آج بل کو سینیٹ اجلاس میں پیش کیا گیا جسے منظور کر لیا گیا تھا۔
اس بل کے مطابق بچوں سے  زیادتی میں ملوث افراد کو 10 سے 14 سال تک قید کی سزا سنائی جائے گی۔اس کے علاوہ ایک ایسی ہیلپ لائن قائم کی  جائے گی جس پر بچوں کی گمشدگی اور اغوا کے معاملات کو فوری طور پر رپورٹ کیا جائے گا اور مقامی پولیس فوری  کارروآئی کرے گی۔قومی اسمبلی کے بعد اب سینیٹ نے بھی زینب الرٹ بل کی منظوری دے دی تھی۔ بل منظوری کے بعد  اب اسلامی نظریاتی کونسل نے زینب الرٹ بل کا نا م تبدیل کرنے کی تجویز پیش کر دی ہے۔تفصیلات کے مطابق اسلامی  نظریاتی کونسل حکام کی جانب سے یہ تجویز پیش کرتے ہوئے موقف اپنایا گیا ہے کہ بل کا نام تبدیل ہونا چاہیئے۔ اگر یہی  نا م استعمال ہوتا رہا تو ننھی زینب کے گھر والے اس حادثے کو کبھی بھول نہیں سکیں گے اور ہمیشہ دباﺅ کا شکار رہیں گے۔