شہباز شریف کی قیادت پر کسی نے سوال نشان نہیں اٹھایا: احسن اقبال

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے جنرل سیکرٹری احسن اقبال نے کہا ہے کہ شہباز شریف کی قیادت پر کسی نے سوال نشان نہیں اٹھایا ہے، شہباز شریف جب تک چاہیں نوازشریف کے علاج کے لیے لندن میں رکیں۔ انہوں نے کہا کہ شہبازشریف کا اپنے بھائی کے ساتھ موجود ہونا ان کے علاج کا حصہ ہے، شہبازشریف جب تک محسوس کریں نوازشریف کے علاج کے لیے رکیں،ہم ان سے واپسی کا کوئی مطالبہ نہیں کررہے۔واضح رہے کہ آج احسن اقبال اور سردار ایاز صادق نے ارلیمنٹ ہاؤس میں واقع چیمبر میں چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری سے ملاقات کی، ملاقات میں قومی اسمبلی اجلاس سے متعلق حکمت عملی ،اپوزیشن سے متعلقہ امور اور ملکی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

لاقات ن لیگ کے رہنماؤں نے بلاول بھٹو کے نواز شریف اور شہباز شریف سے متعلق بیانات پر ان سے شکوہ کیا تاہم بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ملکی حالات کا تقاضہ ہے کہ اپوزیشن لیڈر کو ملک میں ہونا چاہئیے، ان کی غیر موجودگی سے حکومت کو تنقید کا موقع ملتا ہے۔

ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے احسن اقبال کا کہنا تھا کہ شہباز شریف اپنے بھائی نواز شریف کے علاج کے لیے لندن میں ہیں اور وہ ان کی صحت بہتر ہونے پر واپس آجائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعلٰی پنجاب عثمان بزدار سے ملنے والے ن لیگی ارکان وہی ہیں جو پہلے بنی گالہ جاچکے ہیں،ان کے خلاف صوبائی پارلیمانی پارٹی نوٹس لےگی۔ یاد رہے کہ رہے کہ اپوزیشن لیڈر شہباز شریف اپنے بھائی اور سابق وزیراعظم نواز شریف کے ساتھ گذشتہ سال 19 نومبر سے لندن میں موجود ہیں جہاں نواز شریف کا طبی معائنہ اور مختلف ٹیسٹ کیے جارہے ہیں۔گزشتہ چند دنوں سے ملکی سیاست میں شہباز شریف کی وطن واپسی کے حوالے سے باتیں ہورہی ہیں جبکہ حکومت بھی نواز شریف اور شہباز شریف کی واپسی کیلئے برطانوی حکومت سے رابطے میں ہے۔