چودھری پرویز الٰہی نے شریف خاندان پر کیے احسانات یاد کروا دیے

مسلم لیگ ق کے مرکزی رہنماء اور اسپیکر چودھری پرویز الٰہی نے شریف خاندان پر کیے احسانات یاد کروائے، انہوں نے خواجہ برادران کو کہا کہ مشرف چاہتے تھے ان کی فیکٹریاں بند کروائیں، لیکن میں نے ایسا نہیں کیا، بلکہ حمزہ شہبازکی درخواست پر ہمیشہ ریلیف دلایا،مشرف مجھ سے ناراض بھی رہتے تھے،میں نے حمزہ اور سلمان رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری کیے۔
میڈیا رپورٹس کے مطابق اسپیکر چودھری پرویز الٰہی اور خواجہ برادران کے درمیان ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آگئی۔ ملاقات میں پرویز الٰہی نے شریف خاندان پر کیے احسانات یاد کروائے۔کسی کی پروا کیے بغیر حمزہ شہباز اور سلمان رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری کیے۔حالانکہ حمزہ شہباز نے اسمبلی میں میرا سینئر اور بڑا ہونے کا بھی کوئی لحاظ نہیں کیا۔

لیکن میں پھر بھی پروڈکشن آرڈر جاری کیے۔انہوں نے کہا کہ شریف خاندان رمضان شوگرمل پر غنڈوں سے تنگ تھالیکن حمزہ شہباز کی درخواست پر انہیں ریلیف دلایا۔حمزہ شہباز نے اپنا مینجربھیجا کہ غنڈوں سے ہماری جان چھڑوائیں۔لیکن میں نے فوری ریلیف دلایا، ہم نے غنڈے نہیں بھیجے تھے ہم غیرجانبدار بھی رہ سکتے تھے۔انہوں نے کہا کہ پرویز مشرف جب اقتدار میں تھے توشریف برادران کو ریلیف دلانے پر مشرف مجھ سے ناراض رہتے تھے۔
مشرف چاہتے تھے کہ شریف خاندان کی فیکٹریاں بند کردی جائیں لیکن میں نے ایسا نہیں ہونے دیا۔خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ ہمیں ان باتوں کا پہلے علم نہیں تھا کہ آپ نے اتنا کردار ادا کیا ہے۔ واضح رہے گزشتہ روز اسپیکر پنجاب اسمبلی اور مسلم لیگ ق کے مرکزی سینئر رہنماء چودھری پرویز الٰہی سے خواجہ برادران سعد رفیق اور سلمان رفیق نے ملاقات کی، شہبازشریف کی اجازت سے 20 سال بعد خواجہ برادران کی چودھری پرویزالٰہی سے پہلی باضابطہ ملاقات ہوئی۔ ملاقات میں خواجہ برادران نے سابق وزیراعظم چودھری شجاعت حسین کی خیریت دریافت اور نیک تمناؤں کا اظہار کیا، خواجہ برادران نے کورونا وائرس سے نمٹنے کیلئے پرویز الٰہی کی کاوشوں کو سراہا۔