سندھ میں کورونا پھیلاؤ کا سبب بننے والوں پر 10لاکھ جرمانہ ہوگا، سندھ وبائی امراض ایکٹ 2014میں ترمیمی آرڈیننس لانے کا فیصلہ

سندھ میں کورونا پھیلاؤ کا سبب بننے والوں پر 10لاکھ جرمانہ ہوگا، سندھ وبائی امراض ایکٹ 2014میں ترمیمی آرڈیننس لانے کا فیصلہ، سندھ حکومت نے سندھ وبائی امراض ایکٹ 2014میں ترمیم کے لیے آرڈیننس لانے کا فیصلہ کیا ہے، آرڈیننس کا مسودہ منظوری کے لئے سندھ کابینہ اجلاس میں پیش کیاجائیگا جس کے بعد گورنر سندھ کو منظوری کے لئے ارسال کیا جائیگا۔
سندھ حکومت نے کورونا وبا کے پھیلاو کو روکنے سے متعلق حکومتی اقدامات پر عمل نہ کرنے کی مسلسل شکایات اور طبی عملے کو درپیش مشکلات کا حل نکالنے کے لئے یورپی وخلیجی ممالک کی طرز پر جرمانہ عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور اب صوبے میں کورونا وائرس کی وبا پر قابو پانے میں رکاوٹ بننے اور پھیلاؤ کا سبب بننے والے افراد اور اداروں کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

قانون شکنی کرنے والوں کیلئے جرمانے کی رقم دو لاکھ روپے سے دس لاکھ روپے تک رکھنے کی تجویز ہے، ذرائع کا کہنا ہے کہ ایک مرتبہ جرمانہ ادا کرنے کے بعد دوسری مرتبہ کوروناوائرس کے پھیلاؤ کا سبب بنا تو پھر دس لاکھ تک جرمانہ دوبارہ ادا کرنا ہوگا۔ خیال رہے کہ پہلی مرتبہ وبائی امراض ایکٹ کی دفعات کی خلاف ورزی پر درج شرح سے جرمانہ وصول کیاجائے گا جب کہ مسلسل خلاف ورزی پر جرمانے کی شرح میں اضافہ ہوگا۔
دوسری جانب حکومت سندھ نے تاجروں کو آن لائن کاروبارکی مشروط اجازت دے دی ہے محکمہ داخلہ سندھ کے مطابق آن لائن کاروبارشٹربند ہوگا کسی بھی قیمت پردکان کھولنے یا شٹراٹھانے کی اجازت نہیں ہوگی ۔چھوٹے تاجروں کے مطالبہ پرحکومت نے تاجروں کو آن لائن کاروبارکی اجازت دے دی ہے مگریہ اجازت مشروط طوپردی گئی ہے اورکاروبارکے دوران کسی بھی دکان پرخریدارکا آنا ممنوع ہوگا اورکسی بھی دکان سے خریداری کی اجازت کے لیے دکان کھولنے یا اسطرح کی کسی سرگرمی کی اجازت نہیں ہوگی ۔
محکمہ داخلہ سندھ کے جاری کردہ نوٹیفیکیشن کے مطابق آن لائن کاروبارکے لیے دکان کا شٹراٹھانے کی اجازت نہیں ہوگی،تمام خریدوفروخت آن لائن ہوگی اورآن لائن کاروباررسید پرہوگااور آن لائن کاروبارکی ایک رسید بطورثبوت حکومت کوجمع کرانا ہوگی محکمہ داخلہ سندھ کا کہنا ہے کہ آن لائن کاروبارکے لیے ایس او پیزپرعمل درآمدنہ کرنیکی صورت میں انتظامیہ دکان کو سیل کردے گی ۔