قومی رابطہ کمیٹی کا چھوٹی مارکیٹیں اور دکانیں ہفتے میں5 روز کھولنے کا اعلان

قومی رابطہ کمیٹی نے چھوٹی مارکیٹیں اور دکانیں ہفتے میں 5 روز کھولنے کا اعلان کردیا، تمام کاروبار ہفتے میں دو روز بند رہیں گے، وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کہا کہ فیصلہ کیا گیا کہ چھوٹی مارکیٹیں اور دکانیں فجر سحری سے شام 5 بجے تک کھولی جائیں گی، جبکہ رات کو تمام مارکیٹیں بند رہیں گی، جبکہ باقی اشیائے خوردونوش کی دکانیں پورا ہفتہ کھولی جاسکیں گی۔
انہوں نے وزیراعظم عمران خان کے ہمراہ میڈیا بریفنگ میں بتایا کہ انسانی جان زیادہ ضروری ہے یا کاروبار زیادہ ضروری ہیں؟ لوگوں سے کہتا ہوں کہ تمام فیصلے انسانی زندگیوں پرپڑنے والے اثرات کو دیکھ کر لے رہے ہیں۔ ایک وقت تھا جب بیٹی کے جہیز کے لیے پیسے جمع کررہے تھے، اب وہ پیسے خرچ کرنا پڑ رہے ہیں ، انسان سب سے زیادہ ضروری ہے، ہمیں تمام فیصلے انسانی زندگیوں کو مدنظر رکھ کرکریں گے۔

ٹی وی شوز میں ایسے لگتا ہے وفاق اور صوبے دست وگریباں ہیں، ایسا نہیں ہے، تمام فیصلے مشاورت سے کیے جاتے ہیں۔ کل ہم نے تمام وزراء اعلیٰ کو این اوسی اجلاس میں بلایا، صوبوں کے ساتھ سیرحاصل بحث ہوئی ، تجاویز اور سفارشات کو آج قومی رابطہ کمیٹی میں رکھا گیا۔ وزیراعظم اگر چاہتے تو آئینی طاقت استعمال کرکے اپنے فیصلے صوبوں پر مسلط کرسکتے تھے، لیکن وزیراعظم نے تمام صوبوں سے مشاورت کے ساتھ فیصلے کیے۔
صوبوں کے ساتھ آج 6 چیزوں پر اتفاق رائے سے فیصلے ہوئے ہیں، پہلا یہ کہ کنسٹرکشن انڈسٹری کا دوسرا مرحلہ کھولیں گے، دیہاتوں اور محلوں میں چھوٹی مارکیٹں اور دکانیں کھولنے کی اجازت ہوگی۔ پہلے صرف چند دکانیں کھولنے کی اجازت تھی۔ یہ ایسی دکانیں ہیں جہاں بڑے ہجوم نہیں ہوتے، فیصلہ کیا گیا کہ چھوٹی مارکیٹں اور دکانیں فجر سحری سے شام 5 بجے تک ہفتے میں 5 روز کیلئے کھولی جائیں گی، تاکہ لوگ سحری کے وقت نکل کرشاپنگ کرسکیں گے۔ جبکہ رات کو مارکیٹس بند رہیں گی۔ جبکہ باقی اشیائے خوردونوش کی دکانیں ہفتہ بھر کھولی رہیں گی۔ اسی طرح تمام کاروبار، چھوٹی مارکیٹیں اور دکانیں ہفتے میں دو روز کیلئے بند رکھے جائیں گے۔ ہسپتالوں میں اوپی ڈیز کھولنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔