پاکستان ایٹمی توانائی کمیشن کے سائنسدانوں کی وینٹی لیٹر تیار کرنے میں بڑی کامیابی

پاکستان ایٹمی توانائی کمیشن کے سائنسدانوں نے آئی سی یو وینٹی لیٹر تیار کرنے میں بڑی کامیابی حاصل کرلی ہے، ترجمان پی اے ای سی نے کہا کہ پاکستانی سائنسدانوں نے پہلا آئی سی یو وینٹی لیٹر تیار کرلیا ہے، ڈریپ نے وینٹی لیٹر کے استعمال اور تیاری کی منظوری دے دی، کورونا وباء کے تناظر میں وینٹی لیٹر آئی سی یو(آئی لیو) کے نام سے متعارف کروایا گیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق پاکستان ایٹمی توانائی کمیشن کے سائنسدانوں اور انجینئرز نے پہلا آئی سی یو وینٹی لیٹر تیار کرلیا ہے۔ وینٹی لیٹر کو آئی لیو کے نام سے متعارف کروایا گیا۔ ڈریپ نے وینٹی لیٹر کے استعمال اور تیاری کی منظوری دے دی۔ ڈریپ کی منظوری کے بعد اب بڑے پیمانے پر وینٹی لیٹر کی تیاری شروع کردی جائے گی۔
آئی سی یو وینٹی لیٹر مروجہ طبی معیارات کے مطابق تیار کیا گیا۔

اس وینٹی لیٹر مشین کی جناح ہسپتال لاہور میں بھی جانچ کی گئی۔ وینٹی لیٹر کی جانچ کے بعد طبی ماہرین اور انجینئرز نے حتمی تیاری کی منظوری دی۔ بتایا گیا ہے کہ وینٹی لیٹر پی آئی ٹی سی اور پی ای سی کے معیارات پر بھی پورا اترا ہے۔کورونا وباء کے تناظر میں وینٹی لیٹر آئی سی یو آئی لیو کے نام سے متعارف کروایا گیا ہے۔دوسری جانب وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی شبلی فراز کا کہنا ہےکہ پاکستان میں تیار وینٹی لیٹرز اور طبی آلات عالمی معیار کے مطابق ہونے چاہئیں۔
وفاقی وزیر کی زیرصدارت اجلاس میں بتایا گیا کہ57 وینٹی لیٹرز کے ڈیزائن میں سے 16 اے ٹی پی کے معیار پر پورا اترتے ہیں، پاک وینٹ ون اور لائیو وینٹ ون وینٹی لیٹر کی ڈریپ کے ذریعے کلینیکل توثیق کی گئی۔ دو مزید وینٹی لیٹرز پی ای سی کے ساتھ تصدیق کے آخری مراحل میں ہیں۔ بریفنگ میں کہا گیا کہ پاکستان کے تیارکردہ وینٹی لیٹر سسٹم عالمی معیار کے ساتھ مطابقت رکھتے ہیں۔اسی طرح آج شبلی فراز کو بریفنگ میں بتایا گیا کہ ادارہ عالمی معیار کے وینٹی لیٹرکی تیاری کی صلاحیت حاصل کرچکا۔ وینٹی لیٹر سازی کی صلاحیت کے ضمن میں ایف ڈی اے کی تصدیق کا انتظارہے۔ اسی طرح کورونا وباء کے دوران 109خراب وینٹی لیٹرز کو استعمال کے قابل بنایا گیا ہے۔