نوازشریف کی جائیداد نیلامی کیخلاف درخواستیں، عدالت نے فیصلہ سنادیا

اسلام آباد کی احتساب عدالت نے نواز شریف کی جائیداد نیلامی کے خلاف دائر 3 درخواستوں پر محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے انہیں مسترد کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت اسلام آباد کے جج اصغر علی کی جانب سے پاکستان مسلم لیگ ن کے قائد سابق وزیر اعظم نواز شریف کی جائیداد نیلامی کی درخواستوں پر محفوظ فیصلہ سنایا گیا ، جس میں احتساب عدالت نے جائیداد ضبطگی نیلامی کے خلاف دائر تمام درخواستوں کو مسترد کردیا۔
بتایا گیا ہے کہ درخواستیں شہری اشرف ملک ، اسلم عزیز ار اقبال برکت کی جانب سے دائر کی گئیں تھیں جو کہ مسترد کردی گئی ہیں تاہم احتساب عدالت میں دیگر درخواستوں پر سماعت 16 جون کو ہو گی۔ خیال رہے کہ پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر سابق وزیر اعظم نوازشریف کی جائیدادیں نیلامی کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کیا گیا، سابق وزیراعظم کی لاہور اور شیخوپورہ میں جائیدادوں کی نیلامی کے حوالے سے مختلف درخواستیں دائر کی گئیں، نوازشریف کے لاہور میں پھلوں کے باغات کی نیلامی کا فیصلہ ہائی کورٹ میں چیلنج کیا گیا ہے، عدالت میں دی گئی درخواست میں کہا گیا ہے کہ ڈی سی لاہور 105 ایکٹراراضی نیلام کرنے کیلئے قبضےمیں لے رہے ہیں، زمینیں ٹھیکے پر لے کربھاری سرمایہ کاری کی، پھلوں کے باغ پرلگا سرمایہ ابھی واپس نہیں ہوا، نیلامی سے میری سرمایہ کاری ضائع ہونے کا خدشہ ہے۔
جب کہ ڈی سی شیخوپورہ کی جانب سے جائیدادوں کی نیلامی کے لیے بولی کی تاریخ مقرر کرنے کے فیصلہ کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کیا گیا، یہاں درخواست گزار اشرف ملک کا موقف ہے کہ شیخوپورہ کی 88 کنال اراضی نواز شریف سے خرید چکا ہوں، نواز شریف کو 75 ملین روپے کی ادائیگی بھی کی جاچکی ہے تاہم نواز شریف کی گرفتاری کے باعث سیل ڈیڈ پر عمل درآمد نہ ہوسکا، سیل ڈیڈ پر عمل درآمد کے لیے سول کورٹ سے رجوع کررکھا ہے لہذا ڈی سی شیخوپورہ کو زرعی اراضی کی نیلامی سے روکا جائے، تاہم اسلام آباد ہائی کورٹ نے توشہ خانہ ریفرنس میں سابق وزیر اعظم نواز شریف کی جائیداد نیلامی رکوانے کی تمام درخواستیں مسترد کردیں۔